راولپنڈی میں بھی ’’یوم تحفظ ختم نبوت‘‘ کے طور پر منایا گیا

توہین رسالت ﷺ پر مبنی خاکوں کی اشاعت کے بعدتحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی)کی جانب سے فرانسیسی سفیر کو ملک بدرنہ کرنے کے خلاف جاری تحریک، پیدا ہونے والی نئی صورتحال اور لاہور آپریشن کے نتیجے میں ملک کے دیگر شہروں کی طرح راولپنڈی میں بھی پیر کے روز’’یوم تحفظ ختم نبوت‘‘ کے طور پر منایا گیااس موقع پر مذہبی جماعتوں ،وکلا ،تاجروں ،سول سوسائٹی اور مختلف مکاتب فکرنے کالعدم تحریک لبیک پاکستان سے بھر پور یکجہتی کا اظہارکیا مرکزی روئیت ہلال کمیٹی کے سابق چیئر مین مفتی منیب الرحمان کی کال پر ملک کے دیگرشہروں کی طرح راولپنڈی میں بھی مکمل پہیہ جام اور شٹر ڈائون ہڑتال کی گئی جبکہ مختلف مذہبی جماعتوں سول سوسائٹی اور تاجروں نے مظاہرے کئے اجلاس منعقد کئے ناموس رسالت ﷺ کے مسئلہ پر موجودہ حالات کے پیش نظر جڑواں شہروں کے اکابرین، جید علمائے کرام اور تاجر رہنماؤں کا مشترکہ اجلاس مرکز عزیز جامع مسجد صدیق اکبرؓ الٰہ آباد راولپنڈی میں منعقد ہواکالعدم ٹی ایل پی کے خلاف آپریشن کے خلاف پاکستان بار کونسل کی کال پرراولپنڈی میں بھی وکلانے ہڑتال اور کچہری چوک میں احتجاجی مظاہر ہ کیا مرکزی انجمن تاجران راولپنڈی کے تینوں دھڑوںکی جانب سے علما کرام کے ساتھ اظہار یکجہتی کیلئے شٹرڈاؤن ہڑتال کی گئیں اس مقصد کے لئے تمام جیولری اورفرنیچر مارکیٹوں کے علاوہ مری روڈ، اردو بازار، لیاقت مارکیٹ، لیاقت روڈ، تلواڑاں بازار، سبزی منڈی، کمرشل مارکیٹ، مری روڈ، رابی سینٹر، ملک آباد، گلف سینٹر، دوبئی پلازہ،کلاتھ مارکیٹ، راجہ بازار، سٹی صدر روڈ، گندم منڈی، غلہ منڈی، جامع مسجد روڈ، مغل سرائے، بیرون مغل سرائے ، کمرشل مارکیٹ اور سٹلائیٹ ٹائون سمیت تمام بڑے کاروبای وتجارتی مراکز اور ہول سیل مارکیٹوں میں مکمل شٹرڈاؤن کیا گیا ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن راولپنڈی کے زیر اہتمام تحفظ ختم نبوت کے حق میں اور لاہور آپریشن کے خلاف راولپنڈی میں وکلا نے ہڑتال کی عدالتی امور کا بائیکاٹ کیا اور کچہری چوک میں احتجاج کیا قیادت میں ہونے والے احتجاج ڈسٹرکٹ بار کے صدر رضوان اختر اعوان ،سیکریٹری عمران یوسف خان نیازی کے علاوہ پنجاب بار کونسل کے ممبران توفیق آصف اور بشارت اللہ خان سابق ممبرسجاد اکبر عباسی سمیت مردو خواتین وکلانے بڑی تعداد میں شرکت کی وکلا قائدین نے حکومتی اقدامات کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ معاملات کو افہام تفہیم سے حل کیا جائے انہوں نے کہاکہ بے گناہ اور نہتے لوگوں کے خلاف پولیس کاروائی اور تشدد کئی جانیں لے گیاجس کا حساب کون دے گا انہوں نے خبردار کیاکہ حکومت ہوش کے ناخن لے اورپرتشدد انداز حکمرانی بند کرے ادھر مرکز عزیز جامع مسجد صدیق اکبرؓ الٰہ آباد راولپنڈی میں منعقدہ اجلاس میں مولانا قاضی عبدالرشید ،صاحبزادہ پیر عتیق الرحمان عزیز، قاری مشتاق احمد ، مفتی اویس عزیز، مولانا اشرف علی ،مولاناعبدالمجید ہزاروی ،مولانا نذیر فاروقی اور مفتی عبدالسلام سمیت جید علما کرام تاجروں اور مختلف مکتبہ فکر سے تعلق رکھنے والے افراد نے شرکت کی اجلاس میں اس مر پر اتفاق کیا گیاکہ تحفظ ناموس رسالت کا مسئلہ سیاسی نہیں ہے بلکہ ہمارے ایمان کا جزو ہے،نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم ہمارا آخری سہارا ہیںکوئی بھی مسلمان اس پر کسی قسم کا کوئی سمجھوتہ قبول نہیں کر سکتافرانس نے جو حضور کی شان میں گستاخی کی اس سے مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی حکومت نے جو معاہدہ کیا اور اس کو نظر انداز کیا گیا،معاہدہ کرنے والوں کو فوری مستعفی کیا جائے فرانسیسی سفیر کو فوری طور پر ملک بدر کیا جائے،فرانس کے سفیر کی ملک میں رہنے کی کوئی جگہ نہیں اجلاس میں کہا گیا کہ ملک دشمن طبقہ ملک کے امن کو خراب کر رہا ہے ملک کی سالمیت پر بھی ہم کوئی آنچ نہیں آنے دیں گے بہنے والا خون بھی ہمارے ملک کا ہے ملک دشمن ملک کے امن کو تباہ کر رہے ہیں،یہودی لابی کے ایجنڈے کی تکمیل نہیں ہونے دیں گے اس موقع پر آئندہ کا لائحہ عمل طے کرنے کے لئے علماپر مشتمل رابطہ کمیٹی تشکیل دی گئی ہم ملک میں ہونے والے تشدد کی مذمت کرتے ہیں فوری طور پر مذاکرات کا راستہ اختیار کیا جائے انہوں نے خبردار کیا کہ جب تک پاکستان میں تحفظ ناموس رسالت اور صحابہ کی عظمت کا تحفظ نہیں ہو گا چین سے نہیں بیٹھیں گے آئندہ جمعةالمبارک میں تحفظ ناموس رسالت کے حوالے سے خطبات دیئے جائیں گے انہوں نے شہر و چھائونی میں مکمل شٹر ڈائون پر تاجر برادری کا بھی شکریہ ادا کیادریں اثناعوام کی بڑی تعداد پیر کے روزوفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید کی رہائش گاہ لال حویلی کے سامنے پہنچ گئی جہاں پرمظاہرین نے لال حویلی کا گھیرائو کر لیااوروفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد کے خلاف نعرے بازی کی مظاہرین کے جمع ہوتے ہی پولیس اور رینجرز کے دستے بھی لال حویلی کے باہر پہنچ گئے تاہم مظاہرین لال حویلی کے باہر کافی دیر نعرے بازی کرنے کے بعد منتشر ہو گئے ۔

Leave a comment

اپنا تبصرہ بھیجیں